27

11 جنوری ….. آج ابن انشاء کی 45ویں برسی ہے۔”

11 جنوری ….. آج ابن انشاء کی 45ویں برسی ہے۔”

ابن انشاء (اصل نام شیر محمد خان) ایک پاکستانی اردو شاعر، مزاح نگار، سفرنامہ نگار اور اخباری کالم نگار تھے۔ اپنی شاعری کے ساتھ ساتھ ان کو اردو کے بہترین مزاح نگاروں میں شمار کیا جاتا تھا۔ ان کی شاعری میں الفاظ کے استعمال اور تعمیر میں امیر خسرو کی یاد دلانے والی زبان کا ایک مخصوص محاورہ ہے جو عام طور پر ہندی اردو کمپلیکس کی زمینی بولیوں میں سنا جاتا ہے، اور ان کی شکلیں اور شاعرانہ انداز نسلوں پر اثر انداز ہوتا ہے
۔
انشا کی پیدائش پنجاب، ہندوستان کے ضلع جالندھر کی تحصیل فیلور میں ہوئی۔ ان کے والد کا تعلق راجستھان سے تھا۔ 1946 میں انہوں نے بی اے کیا۔ پنجاب یونیورسٹی سے ڈگری اور اس کے بعد 1953 میں کراچی یونیورسٹی سے ایم اے کیا۔ وہ ریڈیو پاکستان، وزارت ثقافت اور نیشنل بک سینٹر آف پاکستان سمیت مختلف سرکاری خدمات سے وابستہ رہے۔ اس سے وہ بہت سی جگہوں کا دورہ کرنے کے قابل ہوے ، جن میں سے سبھی نے ان سفرناموں کو متاثر کیا جو اس کے بعد لکھی گئی۔ ترکی، فرانس، برطانیہ اور امریکہ۔ ان کے اساتذہ میں حبیب اللہ غضنفر امروہوی، ڈاکٹر غلام مصطفی خان اور ڈاکٹر عبدالقیوم شامل تھے۔ 1940 کی دہائی کے اواخر میں، اپنی جوانی کے سالوں میں، ابنِ انشاء نے لاہور میں معروف فلمی شاعر ساحر لدھیانوی کے ساتھ بھی مختصر مدت کے لیے اکٹھے زندگی گزاری تھی۔ وہ پروگریسو رائٹرز موومنٹ میں بھی سرگرم رہے ۔۔

ابن انشاء نے اپنی باقی زندگی کراچی میں گزاری اس سے پہلے کہ وہ 11 جنوری 1978 کو ہڈکنز لیمفوما سے انتقال کر گئے، جب وہ لندن میں تھے۔ بعد میں انہیں کراچی، پاکستان میں دفن کیا گیا۔ ان کے بیٹے رومی انشا 16 اکتوبر 2017 کو اپنی موت تک پاکستانی ہدایت کار رہے۔
انشاء کو اپنی نسل کے بہترین شاعروں اور ادیبوں میں شمار کیا جاتا ہے۔ ان کی سب سے مشہور غزل انشا جی اٹھو اب کوچ کرو ایک بااثر کلاسک غزل ہے۔ ابنِ انشا نے اپنی حس مزاح کو ظاہر کرتے ہوئے کئی سفرنامے لکھے اور ان کے کام کو اردو کے ادیبوں اور نقادوں دونوں نے سراہا ہے۔ انہوں نے 1960 میں چینی نظموں کے مجموعے کا اردو میں ترجمہ بھی کیا۔ان کی چند بہترین شاعری یہ ہیں:
استاد امانت علی خان نے گایا انشا جی اٹھو اب کچھ کرو
کل چودوی کی رات تھی، شب بھر رہا چرچا تیرا، جگجیت سنگھ نے گایا
کیا بستی کی اک کوچے میں
چاند نگر
دل وحشی بلو کا بستہ (بچوں کے لیے نظمیں شامل ہیں:
ان کے سفر ناموں کے نام یہ ہے،
آوارہ گرد کی ڈائری، دنیا گول ہے ، ابن بطوطہ کے تعاقب میں، چلتے ہو تو چین کو چلیئے، اور نگری نگری پھرا مسافر
ان کی مزاحیہ کتابیں ہیں: آپ سے کیا پردہ، خمار گندم، اردو کی آخری کتاب (1971)
خط انشا جی کے ان کے خطوط کا مجموعہ ہے۔
ابن انشاء کو 1978 میں صدر پاکستان نے پرائیڈ آف پرفارمنس ایوارڈ سے نوازا۔۔۔!!!!

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں