483

عرصہ دراز سے کنگ روڈ نادرا آفس تعینات حسیب انور بٹ خواتین کو ہراساں کرنے لگا

عرصہ دراز سے کنگ روڈ نادرا آفس تعینات حسیب انور بٹ خواتین کو ہراساں کرنے لگا
نادرہ آفس میں حسیب انور نے اپنے دفتر کو ذاتی ڈیرہ بنا رکھا ہے ہے جہاں پر لوگوں کو سرعام کام نہ کرنے کی دھمکیاں دی جاتی ہے
منڈی بہاوالدین (رٹ نیوز یونس گوندل )تمام سرکاری دفاتر میں نے بٹ جیسے لوگ محکموں کی بدنامی کا باعث بن رہے ہیں اعلی حکام کو اس کا سخت نوٹس لینا چاہیے ورنہ لوگ تبدیلی سرکار سے بھی مایوس ہو جائیں گے لمبی لمبی لائنیں گھنٹوں انتظار کرنے کے بعد جب نمبر آتا ہے تو موصوف کہتے ہیں کہ ہم کچھ نہیں کر سکتے جان بوجھ کر چھوٹی موٹی غلطیاں نکال کر عوام کو پریشان کیا جا رہا ہے خواتین کے ساتھ بدتمیزی اور غیر ملکی کی شہریت رکھنے والی خواتین کے ساتھ ساتھ لمبی لمبی گفتگو موصوف کا وطیرہ بن چکا ہے ہے ایک خاتون سے نمبر مانگنے پر جب اس نے انکار کیا تو اس کو ذلیل کیا جاتا رہا ہے نادرا آفس کے باہر انتظار کرنے والی عوام نے اپیل کی ہے کہ حسیب انور کو ضلع بدر کیا جائے یا اس کو کو ٹرانسفر کیا جائے اس کی جگہ کوئی اچھا آفیسر تعینات کر کے عوام کو ریلیف دیا جائے شناختی کارڈ ایک ایسی دستاویز ہے جو گورنمنٹ آف پاکستان کی پالیسی کے مطابق نہایت ضروری ہے جس کے بغیر موجودہ حالات میں باہر نکلنا بھی ممکن نہیں ہے اس میں رکاوٹ ڈالنے والے افسران کے خلاف سخت کاروائی کی جائے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں